خالی آنگن


چٹکی او چٹکی !
کیا ہے ابیہ، کیوں چلا رہی ہیں ؟ ارے لڑکی کبھی تو سیدھی بات کیا کرو ….. اچھا اچھا اب بتایئں کیوں آواز دے رہی تھیں ؟ ارے سن چٹکی ایک کام تو کر دے میرا …. بس معلوم تھا مجھے کہ ضرور کوئی کام آن پڑا ہے تبھی ہمارے نام کی دہایی دی جا رہی ہے ورنہ ….. اچھا اچھا ، خالہ امی کا سرہانہ دیکھ لے کہ وہاں سٹور کی چابیاں موجود ہیں یا نہیں ….. کیا ! خالہ امی کی چابیاں ! نہ بابا نہ ، ہم نہیں جانے کے وہاں …. چٹکی سن تو ….. اپنے چھوٹے سے کروا لیجیو ….
…………………………………………..
…………………………………………..
ہاے دلاراں بی یہ کیا کیا تمنے ؟ سارے صندوق بند کر دیے….. آے ہاے ننھی آپا، ایسا کیا کر دیا ہمنے . صندوق ہے تو بند کرواے ہیں ، اس میں بھی تمہارا ہے خیال کیا ورنہ ان لڑکیوں نے تھوڑا خیال کرنا تھا ، ساری چیزوں کا ناس مار دیا ہے . بس ٹھٹھے لگوا لو ان سے اور کچھ کرنے کے نہیں . ننھی آپا لکھوا لو ہمسے ، کوئی نہیں بیاہنے کا انکو ….. آے ہاے دلاراں بی ایسا تو نہ کہو ، آخر کو اپنی بچیاں ہیں اور …….
دلاراں بی ، دلاراں بی !
کیا ہوا چٹکی ؟ کہاں سے بھاگے آرہی ہے ، دم لے لے . دلاراں بی بہت بھوک لگی ہے ، قسم لے لو جو صبح سے دھیلا بھی منہ میں ڈالا ہو ….. آ میری بچی ، ہم دیے دیتے ہیں ، یہاں تو کسی کو خیال نہیں کہ بچیاں سویرے سے بھوکی ہیں ، کوئی کھانے کو ہے پوچھ لے ہماری بچیوں سے …. ہم جا رہے ہیں ننھی آپا ، ہماری بٹیا کے لئے کچھ بناے دیتے ہیں …..
دلاراں بی بھی نا…..
…………………………………………….
…………………………………………….
ہریالے میاں، بارش آنے والی ہے ، کواڑ بند کر دیں . بڑی آپا ہم وہیں کو جا رہے تھے . طوفان آنے والا ہے شائد …..
……………………………………………
……………………………………………
بجو آنگن میں تنہا کیوں بیٹھی ہیں ، ہوا بہت تیز ہے ، اندر چلتے ہیں .
بجو ، بجو !
ہاں ؛ تم کب آیئ چٹکی ؟ ہم تو ابھی آے پر آپ کیا سوچ رہی تھیں ؟…. آنگن میں پتے گرنے لگے ہیں چٹکی ، کواڑ …..
ہاں وہ تو بڑی آپا نے ہریالے میاں کو کہا تھا بند کرنے کو …..
کواڑ بند کرنے کو ، پر چٹکی …………. کیا ہوا بجو ؟ اب تلک تک رہی ہیں ؟…………….
چٹکی بارش شروع ہو گیئ ہے ، برامدے کا دروازہ بند کر دو ………..
…………………………………………..
…………………………………………..
ارے کسی نے ندیا کو دیکھا ، ضرور آنگن میں ہو گی. ہم ہی دیکھ لیتے ہیں .
ارے نہیں ننھی آپا ، ہمنے انھے اپنے کمرے کی طرف جاتے ہوے دیکھا ہے …… لگتا ہے آج بارش پھر برسے گی !
………………………………………….
………………………………………….
…………………………………………
………………………………………….
ارے دلاراں بی جلدی کر لیجئے . ابھی چٹکی ، ابیہ اور بڑے بچے آجایئں گے . آپ تو جانتی ہیں کتنا ہنگامہ رہے گا ، آخر کو سالوں بعد سب اکھٹے ہو رہے ہیں چھوٹے کی شادی میں . پہلے تو چٹکی ہی ہنگامہ کے رکھتی تھی ، اب تو بچوں والی ہو گیئ ہیں سب ، کہاں تک کر بیٹھتے ہوں گے بچے .
سہی کہتی ہیں ننھی آپا ، اب تو آنگن بھی سونا رہتا ہے .
کہاں رہ گیئ تم دونو ، معلوم بھی ہے کتنے کام ہیں کرنے کو …………
آ ہی رہے تھے بڑی آپا ……….
……………………………………………..
……………………………………………..
شادی کا ہنگامہ تھم گیا تھا . سب برآمدے میں بیٹھے تھے ، بچوں کا شور اٹھ رہا تھا آنگن سے . کواڑ ہمیشہ کی ترہان کھلا تھا .
ہریالے میاں کواڑ بند کر دیں ، بارش کی آمد لگتی ہے …. ابھی کیے دیتے ہیں ننھی آپا ….
کوئی کواڑ دکھیل کر اندر داخل ہو رہا تھا ،
ارے ………………….
بڑی آپا ، ننھی آپا ، دلاراں بی …………دیکھئے تو کون آیا ہے .
سفیان میاں ……………
…………………………………………….
…………………………………………….
بجو بجو ؛ بجو کہاں ہیں آپ ؟ دیکھیں تو کون آیا ہے …. بجو !
چٹکی ک قدم چوکھٹ میں تھم گئے تھے ………
خالہ امی …….
ارے کہاں ہے ندیا ، ندیا دیکھ تو کون ………
چٹکی !…………
خالہ امی سفیان بھیا !
………………………………………………
………………………………………………
سفیان میاں دیر کر دی تم نے ، ندیا سوکھ چکی .
بارش تھم چکی تھی …………..
اب کواڑ بند کرنے یا کھولنے کا کوئی فائدہ نہیں ، منتظر نگاہیں نہیں رہیں …………
……………………………………………
……………………………………………
بجو کے کمرے میں گہرا سکوت تھا اور آنکھیں بند ہو چکی تھیں .
سفیان میاں سر جھکاے ننگے فرش پر بیٹھ گئے ………
………………………………………….
…………………………………………….
آنگن خالی تھا !

Advertisements

The True Face; Myth!


The Real Face! What is the real face? Why do you think that you have showed me my real face? Will you tell me where and when I gave you the right to smack the words on my face?
Alright, you think that I un ivitedly poke into your matters but that was just a HELP. A help for someone who desperately needed that when he was crying out loud on the face of earth and blaming every single existence of him which intentionally made me to jump into your well to pull you out of Life’s destruction but you took me the way you faced the realities or cruelties.

Believe Everything but Trust Nothing!

Heard once but today you made me learnt the meaning.

Head down with low smile.

Life moves on!

دعا


کیا لائی ہو ؟
حلوہ .
کیا چاہیے ؟
مراد.
پا لو گی تو کیا کرو گی ؟
دعا دوں گی .
کسے؟
جو مراد دلا دے .
مراد پانے کے لئے حلوہ لائی ہو اور یقین ہے کہ اسکی دعا سے مراد پا لو گی ، پھر مراد دلانے والے کو دعا دو گی …..
ہاں!
اتنا تردد کیوں کرتی ہو ؟
وہ دعا خود کے لئے کیوں نہیں مانگتی ؟ ہاتھ اٹھانے نہیں آتے یا کبھی اٹھانے کا خیال نہیں آیا ؟
ہاتھ اٹھانے کا گر جان لے ، مراد آپ ہے مل جائے گی .
مراد مل جائے تو منہ میٹھا کرانے حلوہ لے آنا. اب جا دعا کا وقت نہ ٹل جائے . جا ؛ انتظار نہ کر .
اشارہ مل گیا ہے ، بشارت تلاش کرنا تیرا کام ہے . ہاتھ اٹھا لے !

Girl to Nerd to Girl


چلو کہ ہم بھی ہوے آشنا !

Today I flipped the pages of my life history and amazingly came to know that I was a girl; 😀 hey hey don’t take me wrong…

I meant to say GIRLY girl who liked to wear colorful bands, frawks, shoes, accessories including bracelets, ear rings, finger rings etc etc. But Ah that was a time when I wasn’t aware of the cruel world. When jumping on the bed and pillow fight was the loveliest game. When wearing high heels of Maa and using her nail colors was the joyous activity. Dolls, doll house, doll clothing were the precious treasure. So I was a real GIRL. 😛 😀

Time was passing by and I came across the hypocritical cruel world which made me realize the brick realities. Couldn’t recall when I stopped wearing colorful bands, bangles, rings, and frawks and turned into dull statue apparently. :/ Books, copies, pencils, pens and study; so I turned into book worm. Gatherings, family functions, wedding parties, birthdays started freaking me out and I put my best to avoid attending such gatherings. This was all because I was no more GIRLY girl. 😛

When university got over, job filled the remaining vacuum of running away from girls, spontaneously became dormant which lasted for years.

One more chapter closed; let’s start a new one and here I am. Joined another job which turned me into GIRL again or made me recall my childhood GIRL. 🙂

I love to wear colorful bands, bangles, frawks, shoes, ear rings, jeans etc etc. I am a girl again who think like girl, wear like girl, live like girl because I am a born GIRL and I am proud of it and thankful to Allah az’o’jal. 🙂

Humbleness of Life


Every Morning when you wake up and open your eyes with dull hands, suddenly a spark in your dizzy nerve makes you sense the start of a new day which is new according to natural facts but as casual and cozy as your passed days. A factual motivation doesn’t allow you to go back to your numbness but pushes you to think of a new character which you have to play in a melodramatic way to make your surrounding feel the same lively energetic brick spark in you. Though the overall amusement resembles the masquerade appearance but the world demands are amusingly high. The whole day takes its turns either positively or negatively but the mask which you use to wear in the morning couldn’t tear apart because the original you is as unacceptable as rotten nerd. Fanatically you keep moving till the dusk when you come to feel to comfortably remove the TWO-YO face. The underneath is the original you standing on his feet and bending down on his knees due to the burden of one more impure DAY which made you live as you are not and what you are, you can never dare to live or the life itself will tear you apart.

At the end of the day, as one of my friend says; If life is not justified to us, it doesn’t mean that life is doing injustice with us. The thing is how improvingly you play your part on daily basis.