خاموشی


یہاں کیوں بیٹھی ہو ؟
……………………………………………………………….
جواب کیوں نہیں دیتی ؟ یہاں کیوں بیٹھی ہو ؟
ہاں ….
ہاں ، میں وہ ……میں وہ یونہی بیٹھی ہوں ؟
اچھا ہے . کیا سوچ رہی ہو ؟
پتا نہیں ….مجھے پتا نہیں …. سوچتی ہوں ، کیا کروں کہ حالات بدل دوں یا وقت بدل دوں ….ایسا کیا کروں …؟
خود کو ہر شہ سے آزاد کر دو ،
تو کیا اس سے وقت بدل جائے گا ؟
نہیں ….
کچھ بھی بدلنے کی چاہ ختم ہو جائے گی .
………………………………………..
……………………………………………………..
……………………………………………………………….
آج چاہ ختم ہو گیی ہے . وقت بدلے نہ بدلے ، زندگی سے لڑنے کی چاہ ختم ہو گیی ہے ….سب بے معنی ہے .
………………………………………………………………………
یہ سوچ کر قدم بڑھا دیے . گزشتہ ہر دروازہ بند ہو چکا تھا.
نہ چاہ باقی تھی نہ ……………..
باقی تھی تو صرف خاموشی !

Advertisements

Leave a comment

No comments yet.

Comments RSS TrackBack Identifier URI

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s