نامکمل


آج مجھے محسوس ہوتا ہے کہ شائد میں دنیا کی رفتار کے ساتھ نہیں بھاگ سکتی . وقت اور دنیا سے بہت پیچھے گیی ہوں جب اپنے اور لوگوں کے خیالات کے تضاد سامنے آتے ہیں تو حقیقت زیادہ واضح اور صاف دکھایی دینے لگتی ہے. پر ایسا کب ہوا اور کیونکر ، مجھے معلوم کیوں نہیں ہوا. کیا میں واقعی بہت بے وقوف ہوں یا پھر بہت سادہ یا پھر نا اہل ؟
کیا لکھ رہی ہو؟
ہاں….
کچھ نہیں ، بس یونہی …..
تم بھی نہ جانے کس دنیا میں  رہتی ہو ، ہر وقت خاموش اور گمسُم ….
کیا سوچتی رہتی ہو؟
پتا نہیں …
پتا نہیں؟ تو پھر کسے پتا ہے؟
کیا؟
اوہو رہنے دو… میں تو تمہے بلانے آیی تھی پر تم تو کچھ لکھنے میں مگن ہو اتنی کہ تمہے آس پاس کی کوئی خبر ہے نہیں.
……………………………..
………………………………………..
آ رہی ہو؟
نہیں تم جاؤ . میرا موڈ نہیں….
جیسے تمہاری مرضی…
میری مرضی….میری مرضی بھی ہے کیا؟ مرضی کیا ہوتی ہے؟
………………………….
………………………………………….
لوگ دھوکہ کیوں دیتے ہیں اور دھوکہ دیتے وقت سوچتے کیوں نہیں کہ سامنے کھڑا انسان بھی دل رکھتا ہے.  اچھا برا محسوس ہوتا ہے . کیوں نہیں سوچتے لوگ؟
میں کب سے سوئی نہیں. آج اسے یاد آیا. شائد کافی دن ہو گئے. پر میں کیوں نہیں سویی ؟
آج میں جلدی گھر لوٹ آیی .  کے ساتھ بیٹھ کر بات چیت کروں گی پر میری بات کا کوئی جواب ہے نہیں دیتا. اور ان سب کی باتیں اتنی مختلف کیوں ہیں اور ہیں بھی تو میں حصہ لینے کی کوشش تو کرتی ہوں پھر کوئی جواب کیوں نہیں دیتا میری بات کا. شائد میں بوہت آہستہ بولتی ہوں کہ کوئی سن نہیں پاتا …..
شائد……
مجھے اپنی کتاب مکمل کرنی چاہیے. کتابیں سب سے اچھی دوست ہوتی ہیں. اسنے سنا تھا کبھی…..
……………………..
…………………………………..
پھر نہ جانے کتاب پڑھتے پڑھتے کب آنکھ لگ گیی….
برآمدے سے ابھی بھی باتوں کی آوازیں آ رہی تھیں

 

On Someone’s request, I am writing it in English font…………  🙂

Aaj mujhey mehsoos hota hai k shaid mein dunya ki raftar k sath nahi bhag sakti. waqt aur dunya se boht peechey reh gayi hun, jab apne aur logon k khayalat k tazad samne atey hain to haqiqat ziada wazeh aur saaf dikhayi dainey lagti hai, par aisa kab howa aur kionkar, mujhey maloom kion nahi howa? kya mein waqai boht bewakoof hun ya phir boht sadah ya phir na’ehl?

kya likh rahi ho?

haan…

kuch nahi, bas yunhi……….

tum bhi na janey kis dunya mein rehti ho. har waqt khamosh aur gum’sum….

kya sochti rehti ho?

pata nahi………….

pata nahi, to phir kis’sey pata hai?

kya?

oho, kuch nahi. mein to tumhey bulaney ayi thi par tum to itni magan ho kuch likhney mein k tumhey aas paas ki koi khabar he nahi…

…………………………..

………………………………………….

aa rahi ho?

nahi, tum jao. mera mood nahi……………

jaisey tumhari marzi…….

meri marzi…. meri marzi bhi hai kya? marzi kya hoti hai?

…………………………………

…………………………………………………

log dhoka kion daitey hain aur dhoka daitey waqt sochtey kion nahi k samney khara insaan bhi dil rakhta hai. acha bura mehsoos hota hai. kion nahi sochtey log?

mein kab se soi nahi. aaj isey yaad aya. shaid kafi din ho gaye. par mein soyi kion nahi?

aaj mein jaldi ghar lot ayi k sab k sath baith kar baat cheet karoon gee par meri baat ka koi jawab he nahi daita. aur in sab ki batain itni mukhtalif kion hain aur hain bhi to me hissa lainey ki koshish to karti hun phr koi jawab kion nahi daita meri baat ka. shaid mein boht ahista bolti hun k koi sun nahi pata.

shaid………….

mujhey apni kitab mukam’mil karni chaheye, kitabain sab se achi dost hoti hain. isney suna tha kabhi…..

……………………….

…………………………………………

phir na janey kitab parhtey parhtey kab aankh lag gayi.

bar’amdey se abhi bhi baton ki awazain aa rahi thi’in!

Advertisements

4 Comments

  1. Awww, I wish I could read this properly. Care to write it in English? 🙂

    • I wrote it in English font but didn’t translate it in English. I hope it works… 🙂

  2. Yani k itni deep batien!


Comments RSS TrackBack Identifier URI

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s