Morning Walk!


wpid-20140830_063505.jpg wpid-20140830_063453.jpg wpid-20140830_063939.jpg wpid-20140830_064204.jpg wpid-20140830_065015.jpg wpid-20140830_065023.jpg wpid-20140830_065157.jpg wpid-20140830_065206.jpg

Advertisements

یاد نہ آیا کریں


ان یادوں سے کہو یاد نہ آیا کریں,
جو ادھوری سانسیں ہیں ,
وہ آنسوؤں سے پیوستہ ہیں,
تمہے  کیا خبر کیسے جیتے ہیں کیسے ہنسا کرتے ہیں,
کچھ لمحے ادھار  دو,
بس اتنا احساں  کر دو ,
ان ادھار  لمحوں میں ,
یادوں سے کہو یاد نہ آیا کریں,

ہر لفظ تمسے جڑا  ہے ,
ہر لمحہ وہ ہر ورق دوہراتا ہے ,
جو تمسے وابستہ ہے,
ذہن کے افق پر وہ ہر نقش سبط ہے ,
جو تمہاری  یاد کی  بازگشت کو بار بار دوہراتا ہے,
سنو,
پھر یوں کردو,
یادوں سے کہو یاد نہ آیا کریں!

قیمت


زندگی میں ہر چیز کی قیمت ادا کرنی پڑتی ہے , کبھی کبھی اس کی بھی جو ہمارے گمان میں بھی نہیں ہوتیں یا شائد جن کا ہمیں علم تک نہیں ہوتا . انسان دعایئں مانگتا ہے , مرادیں مانگتا ہے , سجدے کرتا ہے پھر بھی جو نصیب میں نہیں لکھا وہ نہیں ملتا . روتا ہے بلکتا ہے پر نہیں ملتا جو نہیں ہے نصیب میں . اور جو نصیب میں نہیں اگر وہ دعایئں بھی نہ دلا سکیں تب خاموشی اختیار کر لینی چاہیے . یاد رکھو شکوہ نہیں کرنا بلکہ راضی بہ رضا ہو جانا . راضی ہو جاؤ  گے تو دل مطمئن ہو جائے گا . سفر آسان ہو جائے گا . پھر قیمت قیمت نہیں بلکہ ذندگی کا قرینہ لگے گی . ایک ہی شرط ہے, راضی بہ رضا ہو جاؤ .

Sayeen AMJAD ISLAM AMJAD!


Sir Se Le ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Ik Behti Rait Ki Dehshat hai
Aur Raiza Raiza Khawab Mere
Bus Aik Musalsal Hairat Hai
Kia Sahil Kia Gardaab Mere
Iss Behti Rait K Darya Paar
Kia Jane Hain Kia Kia Israar
Tum AAQA Charon Tarafon K
Aur Mere Chaar Taraf Deewaar
Is Dharti Se Aflaak Talak
Tum Daata Tum Ho Palanhaar
Mein Galion Ka Kakh Sayeen
Tum Sache Barhaq Sayeen
Sir Se Le Ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Kuch Baid Azal Se Pehle Ka
Kuch Raaz Abad Ki Aankhon K
Kuch Qisa Hijar Saraape Ka
Kuch Bheege Mosam Khawabon K
Koi Chara Meri Pasti Ka
Koi Daru Aankh Tarasti Ka
Bus Aik Nazar Se Jurh Jaye
Aaina Meri Hasti Ka
Azalon Se Raahein Takta Hai
Ik Mosam Dil Ki Basti Ka
Is Ki Aur Bhi Taqk Sayeen
Tum Sache Barhaq Sayeen
Sir Se Le Ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Mein Aik Bhakari Lafzon Ka
Yeh Kaghaz Hain Kashkol Mere
Hain Malba Zakhmi Khawabon Ka
Yeh Rasta Bhatke Bol Mere
Yeh Arz-o-Sama Ki Pehnai
Yeh Meri Adhoori Bainai
Kia Dekhon, Kaise Dekh Sakon
Yeh Hijar Ki Jalwa Aarai
Yeh Rasta Kaale Koson Ka
Aur Aik Musalsal Tanhai
Mangon Aik Jhalak Sayeen

TUM SACHE BARHAQ SAYEEN
SIR SE LE KER PAIRON TAK
DUNIA SHAK HE SHAK SAYEEN

بھرم


نہ جاتے تو کیا ہوتا, بس میرا یقین تو قایم رہتا کہ دعایئں  قبول ہوتی ہیں. کبھی یوں لگتا ہے جیسے لوٹ ہی آ و گے جیسے میری دعایئں  قبول ہو ہی چکی ہیں , جیسے معجزہ  ہونے کو ہے. کہو لوٹ او گے نا . میرے یقین کا بھرم رکھنے کو ہی  کہ دو , ہاں  لوٹ آ ؤں  گا. کہ دو آ و گے نا!

I will…


I will complain to Allah of all of you… I will!

Insaan!


Behad afsos hai, Allah ki bnayi dunya mein Insan ko khuda banna to a gaya par Sirf Insan he banna nahi aya!
Insan ko dosre Insan ko chot lgana to a gaya par marham lgana nahi aya!
Herat hai Insan ko hansna rona to a gaya par ansoo aur pani ka farq samajh nahi aya!
Kion wahan chot lgate ho jahan zakhm bhara nahi, Insan ho, sar utha kar chalna to seekh liya par nazrain jhuka kar khud se neeche daikhna kion nahi seekha!
Kuch zakhm kabhi nahi bharte, kuch lamhon pe sabar kabhi nahi ata, kuch toot jane ka afsos sad’da qayim rehta hai, kuch dard kabhi kam nahi hotey, ab Ye to Rab he janey keh kitni taweel umr likha kar laye ho, Insan ho, kehte ho kuch na’mumkin nahi par jo Rab na maaney to mumkin kaise karo ge. Sab seekh liya par Sirf Rab ko razi karna he nahi seekha!
Insan jo ho!