مرد کی محبّت


محبّت !

محبّت صرف عورت کرتی ہے ، اپنا سب کچھ ایک شخص کے نام کر کے . عورت کی محبّت اسے ایک وجود کے گرد محصور کر دیتی ہے. وہ صرف اسی شخص کو سوچتی ہے اور اسی کی پسند کے مطابق خود کو ڈھال لیتی ہے. اسے باقی دنیا سے غرض نہیں ہوتی، وہ اپنی انا کو خود اپنے ہی پیروں تلے روند کر صرف اپنی محبّت کو پوجتی ہے.

مرد؛ مرد کسی عورت سے محبّت نہیں کرتا. وہ صرف اپنی آنا اپنی ذات سے محبّت کرتا ہے. اسے عورت اپنے قدموں میں جھکی ہوئی چاہیے. وو خود کو خدا بنا لیتا ہے اور چاہتا ہے عورت اسے بلا کسی عذر کے پوجتی رہے. مرد صرف حاصل کرنا چاہتا ہے. اور جو عورت اسے بغیر کسی تگ و دو کے مل جائے وہ اسے ٹھکرا کر اگے چل دیتا ہے. اسے اس بات کی کوئی پرواہ نہیں ہوتی کے وہ عورت اسکی محبّت میں خود کو بھلا کر صرف اس کے لئے اپنا آپ بدلنے کو تیار ہو گیی ہے. وہ عورت کے چہرے پہ لکھی تحریر نہیں پڑھ سکتا. مرد جسے حاصل کر لے اسے توڑ دیتا ہے. اور یہی اسکی انا کی تسکین ہوتی ہے.

مرد عورت کو ٹھوکر مار کر چل دیتا ہے اور عورت تمام عمر ایک وصل لاحاصل میں سرگرداں رہتی ہے. اسکی انا اور خوداری اسکی محبّت کے سامنے ہتھیار ڈال دیتی ہے. پھر تمام عمر وہ ٹھکراے جانے کی اذیت سہتی ہے اور خود کو بہلاتی رہتی ہے.

مرد کبھی محبّت نہیں کرتا . مرد اپنی انا کہ حصار میں قید رہتا ہے. اسے عورت کی محبّت کی نہیں اپنی جیت سے لگاو ہوتا ہے!

مرد کی محبّت ایک سراب کی مانند ہے اور سراب کبھی حقیقت نہیں بنتا!

Inspiration from Ashfaq Ahmed!

Earthquake in Pakistan; 26 October 2015!


And Allah says, I show you signs so you could learn!

We as human being forget things easily but moments recall in front of us; moments which have passed and moments we try to forget. Despite of all our efforts, it happens that history repeats itself.

I still remember the horror of October 2005 earthquake and how could I forget that. It happened in front of my eyes and everything was so shallow that I couldn’t figured out how and where to run. Deaths, injuries, screams, blood; People were crying for their loved ones. Everyone seemed broken, there were tears and heartaches as everyone was effected one or the other way. We survived.

Today after 10 years, October 26, 2015 Pakistan was once again hit by massive 8.1 earthquake. Though I am not in Pakistan but I could feel the pain of people there. My homeland is again at the verge of destruction, people lost their loved ones, hospitals are no more enough to get hold of injured and dead. Death toll is rising!

Once again we are in the situation of asking forgiveness from Allah. We should! Irrespective of political and sects differences, we need to stand together on humanitarian basis to extend a helping hand to each other. To wipe out tears from eyes, to open the doors of our hearts and houses for our brothers.

Be Generous, be a Human!

Have fear of Allah and ask mercy from him!

#PrayforPakistan

P

بدلہ


اپنی تکلیف کا بدلہ کسی دوسرے سے نہیں لیتے، کوئی دوسرا شائد آپ سے زیادہ اذیت سے گزرا ہو!

فرمایش اور ضد


تم اب ضد نہیں کرتی ؟
ضد ؟
ہاں، اب کوبھی بات نہیں منواتی کچھ مانگتی نہیں؟
……………………………………………………………….
……………………………………………………………………………
……………………………………………………………………………………………
فرمایش کرنا کیوں چھوڑ دیا تمنے ؟
………………………………………………….
اب کوئی فرمایش کیوں نہیں کرتی؟
میں نے فرمایش کی کب ہے؟اب یاد بھی نہیں کہ آخری بار کب کس سے اور کیا فرمایش کی تھی.
ضد کیا ہوتی ہے، اب یاد نہیں اور نہ ہی یہ کہ آخری بار کب کس سے اور کیا زد منوایی تھی .
………………………………………………………..
پھر کیا کرتی ہو؟
اس نے خاموشی سے بس دیکھا تھا اسے!
بتاؤ نا کیا کرتی ہو پھر؟
محنت.
محنت؟ وو تو سب ہی کرتے ہیں. کوئی کمانے کے لئے کوئی جینے کے لئے. پر اس ک ساتھ لوگوں کی خواھشات بھی ہوتی ہیں.اچھا گھر، زیور، کپڑے، اچھی گاڑی اور بہت کچھ .
ہوتی ہوں گی .
تو کیا تمہاری نہیں ہیں؟
نہیں.
پھر؟
کیا پھر؟
پھر کیا خواھش ہے تمہاری؟
کچھ نہیں.
کچھ نہیں؟ یہ کیسے ہو سکتا ہے؟
کیوں نہیں ہو سکتا؟
اس دنیا میں جینے کے لئے خواھش کا ہونا ضروری ہے.جینے کی ہی سہی.
اس نے کوئی جواب نہیں دیا تھا، بس خاموش رہی تھی!
تم بہت عجیب ہو.
اچھا.
کیا تمہری کوئی خواھش نہیں؟ کوئی فرمائش کوئی ضد ؟
خواہشیں ناتمام ہی رہتی ہیں، چاہے کتنی ہی زیادہ یا کم کیوں نہ ہوں پھر خواھش کا فائدہ . خود کو کسی خام خیالی میں رکھنے کا کیا فائدہ. اور فرمائش پوری کرنے یا ضد منوانے کے لئے اس فرمائش کو سننے والا اور ضد کو پورا کرنے والا کوئی ہونا چاہیے . جب کوئی ہے ہی نہیں تو فرمائش کس سے کروں اور کس سے ضد منواؤں . اب تو ان الفاظ کے معنی بھی یاد نہیں .
اب دوسری طرف خاموشی تھی………………………..
کوئی تو ہوگا؟
وہ صرف مسکرآیی تھی.
ایسا کیسے ہو سکتا ہے کہ کوئی نہ ہو .
ایسا ہو سکتا ہے.گر یقین نہیں تو مجھے دیکھ لو یقین ہو جائے گا .
اب اس ک پاس الفاظ نہیں تھے…………….
دونوں طرف خاموشی تھی یا سناٹا !

غیر مسلم


جب الله پر اتنا یقین ہے تو پھر الله پر ہی چھوڑ دو ، جو فیصلہ الله کرے گا وہی قبول کر لیں گے ……
ایک گہری خاموشی تھی ……………
……………………………………………
…………………………………………………..
………………………………………………………….
دعا اور یقین سے تقدیریں بدل جاتی ہیں . الله پر امید سے زیادہ یقین ہونا ضروری ہے ………….
پھر انتظار کرو، جب الله چاہے گا ہو جائے گا کیونکہ اگر الله نہ چاہے تو ہم تو چاہ بھی نہیں سکتے …………
……………………………………………………….
……………………………………………………………..
………………………………………………………………………
پھر کیا ہوا تھمنے بتایا نہیں.
اسنے کہا الله پر یقین ہے تو پھر جب جو الله چاہے گا وہی مان لیں گے . صرف دعا کرنا اور یقین رکھنا.
……………….
اچھا! جب بات الله تک پہنچ گیی ہے تو پھر الله کو ہے کرنے دو اور الله تک ہی رہنے دو . تم زور مت دو .
مجھے بہت عجیب لگا تھا کیونکہ یہ بات کسی مسلمان نے نہیں بلکہ ایک غیر مسلم نے کہی تھی . بات الله تک پوھنچ گیی تو الله ہی کرے گا پھر تمہے کیا غم ہے …………………….
آج ہم مسلمان ہو کر صرف بات کر دیتے ہیں، لیکن یقین نہیں کرتے. ایک غیر مسلم نے اتنی بڑی بات سمجھا دی تھی مجھے ….
کیی لمحوں تک میں اسکا چہرہ دیکھتی رہی تھی !

Plan less!


33 years of my life taught me meaningful and worth mentioning lessons which I will ever remember. People ask me various questions about my life when they come to know tiny of me and there I lose all my vocabulary and ever green smile.

I remember when I used to complain a lot even for tiny issues and cry like rivers for small broken things but now neither I complain nor I cry. There was a time when I practiced for years a rumbling of entire day story in front of my dad and mom but now it feels like ages have gone but I don’t feel like saying single word.

At times I feel to speak zillions of words but then suddenly I become speechless as if everything is breaking down and I could never integrate and gather words. My long day stories have been vanished with every passing day. I am a completely different person now.

Like everyone, I used to be passionate about future, used to plan, enthusiastic, energetic and a dreamer. But now I feel empty, no dreams, no plans and above all I have lost energy and day by day it’s dripping out of my body drop by drop.

I have stopped planing and devoted my complete existence to Allah. He plans and he is the best of planners. I had to write my performance development plan and mention where would I be in 4 years. That was an overdose for me, though I spent whole day thinking of but couldn’t write single word that where would I be in next 4 years. No clue why, but I have an intuition that I would be no where in 4 years. Perhaps my name would remain there in few instances but otherwise everything will be vanished.

I brought whole set of energy to write all these lines and now I am exhausted.

There is no plan left, no life and no meaning! I have fallen for Allah!

Psychiatrist!


You better go to psychiatrist. Those were just words but they hit me badly and I have been thinking deeply. Do I really need to visit psychiatrist, have I lost my mind? Really?

I feel you have psychological problems and you don’t understand how to behave and when to respond.

Yes, I have been getting aloof. My mindset is disturbed and my mood swings randomly from very happy to deeply sad. I become grumpy and unreasonable at times. My tolerance level shoots up and lose my control for the worst than worst things. Ultimately I become quiet and these are all the phases which are fighting with each other inside my head. But mostly I am a happy and smiley person, that is what I hear from colleagues and peers. I am friendly, helpful, kind, caring, smart, nice and have generous heart. These words are not mind but quoted by my coworkers.

Now I am going through a phase where I am unable to understand “What do I want?”, “What do I have to do?”, “What are my goals?”, “What’s in my heart?”, “What am I looking for?”, “Where will I end up?”, and my answer is complete “Silence”. Because I don’t know, I honestly don’t know. I have no answer. I am quiet and there is dark, sound silence inside me.

I need to go to psychiatrist!