Earthquake in Pakistan; 26 October 2015!


And Allah says, I show you signs so you could learn!

We as human being forget things easily but moments recall in front of us; moments which have passed and moments we try to forget. Despite of all our efforts, it happens that history repeats itself.

I still remember the horror of October 2005 earthquake and how could I forget that. It happened in front of my eyes and everything was so shallow that I couldn’t figured out how and where to run. Deaths, injuries, screams, blood; People were crying for their loved ones. Everyone seemed broken, there were tears and heartaches as everyone was effected one or the other way. We survived.

Today after 10 years, October 26, 2015 Pakistan was once again hit by massive 8.1 earthquake. Though I am not in Pakistan but I could feel the pain of people there. My homeland is again at the verge of destruction, people lost their loved ones, hospitals are no more enough to get hold of injured and dead. Death toll is rising!

Once again we are in the situation of asking forgiveness from Allah. We should! Irrespective of political and sects differences, we need to stand together on humanitarian basis to extend a helping hand to each other. To wipe out tears from eyes, to open the doors of our hearts and houses for our brothers.

Be Generous, be a Human!

Have fear of Allah and ask mercy from him!

#PrayforPakistan

P

Advertisements

Happy 34th Birthday to Me!


It has been 34 years since I landed in this world  😛

34 years! it’s long time, isn’t it? 🙂

happy-birthday

So for today; This is the only celebration I can do!

Happy Birthday to Me!

سجدے


پھر الله ہمیں دکھا دیتا ہے، ہر چیز واضح کر دیتا ہے . ہمارے ہر سوال کا جواب دے دیتا ہے. اور پھر پوچھتا ہے  کون سہی تھا اور کون غلط.
ہمارے پاس شکرگزاری  کچھ نہیں بچتا . ہمیں اپنی دعاؤں کے رد ہو جانے کا ملال نہیں رہتا. بلکہ الله کی رحمتوں اور رحم کا اعتراف ہونے لگتا ہے. اس ذات نے ہمیں بچا لیا. اوندھے منہ کسی کھایی میں گرنے نہیں دیا.
الله ہمیں عطا نہ کر کے وہ عطا کر دیتا ہے جس کے لئے عمر بھر کے سجدے بھی ناکافی لگتے ہیں.
ہم سجدے سے سر نہیں اٹھا پاتے.کبھی نہیں!

بدلہ


اپنی تکلیف کا بدلہ کسی دوسرے سے نہیں لیتے، کوئی دوسرا شائد آپ سے زیادہ اذیت سے گزرا ہو!

کیوں؟


خدا کو ہمیشہ وہی کیوں چاہیے جو مجھے چاہیے ہوتا ہے؟ وہ ہمیشہ مجھ سے میری چاہ کیوں چھین لیتا ہے ؟ وہ میری دعا کیوں نہیں سنتا؟ وہ میری دعایئں قبول کیوں نہیں کرتا؟ کیا کمی ہے اس کے پاس پھر وہ میری چاہ ہی کیوں لے لیتا ہے مجھ سے؟ وہ تو بےنیاز ہے نا ، سب کو بنا مانگے دے دیتا ہے پھر مجھے مانگے سے بھی کیوں نہیں دیتا؟ گناہ تو سب کرتے ہیں، میں تنہا تو نہیں . پھر مجھے ہی کیوں نہیں ملتا .
کیا میں انسان نہیں یا مجھے تکلیف نہیں ہوتی. پھر الله کو وہ تکلیف کیوں نہیں دیکھتی ؟ مجھے تکلیف ہوتی ہے بہت ہوتی ہے، پھر الله کو کیوں محسوس نہیں ہوتی؟
کیوں؟

Dur Jo Ajj Hain!


فرمایش اور ضد


تم اب ضد نہیں کرتی ؟
ضد ؟
ہاں، اب کوبھی بات نہیں منواتی کچھ مانگتی نہیں؟
……………………………………………………………….
……………………………………………………………………………
……………………………………………………………………………………………
فرمایش کرنا کیوں چھوڑ دیا تمنے ؟
………………………………………………….
اب کوئی فرمایش کیوں نہیں کرتی؟
میں نے فرمایش کی کب ہے؟اب یاد بھی نہیں کہ آخری بار کب کس سے اور کیا فرمایش کی تھی.
ضد کیا ہوتی ہے، اب یاد نہیں اور نہ ہی یہ کہ آخری بار کب کس سے اور کیا زد منوایی تھی .
………………………………………………………..
پھر کیا کرتی ہو؟
اس نے خاموشی سے بس دیکھا تھا اسے!
بتاؤ نا کیا کرتی ہو پھر؟
محنت.
محنت؟ وو تو سب ہی کرتے ہیں. کوئی کمانے کے لئے کوئی جینے کے لئے. پر اس ک ساتھ لوگوں کی خواھشات بھی ہوتی ہیں.اچھا گھر، زیور، کپڑے، اچھی گاڑی اور بہت کچھ .
ہوتی ہوں گی .
تو کیا تمہاری نہیں ہیں؟
نہیں.
پھر؟
کیا پھر؟
پھر کیا خواھش ہے تمہاری؟
کچھ نہیں.
کچھ نہیں؟ یہ کیسے ہو سکتا ہے؟
کیوں نہیں ہو سکتا؟
اس دنیا میں جینے کے لئے خواھش کا ہونا ضروری ہے.جینے کی ہی سہی.
اس نے کوئی جواب نہیں دیا تھا، بس خاموش رہی تھی!
تم بہت عجیب ہو.
اچھا.
کیا تمہری کوئی خواھش نہیں؟ کوئی فرمائش کوئی ضد ؟
خواہشیں ناتمام ہی رہتی ہیں، چاہے کتنی ہی زیادہ یا کم کیوں نہ ہوں پھر خواھش کا فائدہ . خود کو کسی خام خیالی میں رکھنے کا کیا فائدہ. اور فرمائش پوری کرنے یا ضد منوانے کے لئے اس فرمائش کو سننے والا اور ضد کو پورا کرنے والا کوئی ہونا چاہیے . جب کوئی ہے ہی نہیں تو فرمائش کس سے کروں اور کس سے ضد منواؤں . اب تو ان الفاظ کے معنی بھی یاد نہیں .
اب دوسری طرف خاموشی تھی………………………..
کوئی تو ہوگا؟
وہ صرف مسکرآیی تھی.
ایسا کیسے ہو سکتا ہے کہ کوئی نہ ہو .
ایسا ہو سکتا ہے.گر یقین نہیں تو مجھے دیکھ لو یقین ہو جائے گا .
اب اس ک پاس الفاظ نہیں تھے…………….
دونوں طرف خاموشی تھی یا سناٹا !