اے غمِ یار ٹھہر آج کی شب


اے غمِ یار ٹھہر آج کی شب!
لگ چکی تیری سیاہی دل پر
آچکی جو تھی تباہی ،دل پر
زرد ہے رنگ ِ نظر،آج کی شب
خاک کا ڈھیر ہوئے خواب نگر
آج کی شب
اے غمِ یار ٹھہر آج کی شب
کم نظر دیکھ ہوا کی آہٹ
کس کی خوشبو میں بسی آتی ہے
کون سا عکس ہے جس کی خاطر
آنکھ آئینہ بنی جاتی ہے!
کس طرح چاند اچانک جھک کر
سرد شاخوں سے لپٹ جاتا ہے
کس طرح رنگِ چمن
ایک چہرے میں سمٹ جاتا ہے
سیلِ امواجِ تمنّا کیسے
ساحلِ دل سے پلٹ جاتا ہے
اور کس طور سے طے ہوتا ہے
لڑکھڑاتے ہوئے تاروں کا سفر آج کی شب
بے ہنر! آج کی شب
مجھ کو جی بھر کے اُسے یاد تو کر لینے دے
دولت ِ درد سہی جیب تو بھر لینے دے!!

(امجد اسلام امجد)

Sayeen AMJAD ISLAM AMJAD!


Sir Se Le ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Ik Behti Rait Ki Dehshat hai
Aur Raiza Raiza Khawab Mere
Bus Aik Musalsal Hairat Hai
Kia Sahil Kia Gardaab Mere
Iss Behti Rait K Darya Paar
Kia Jane Hain Kia Kia Israar
Tum AAQA Charon Tarafon K
Aur Mere Chaar Taraf Deewaar
Is Dharti Se Aflaak Talak
Tum Daata Tum Ho Palanhaar
Mein Galion Ka Kakh Sayeen
Tum Sache Barhaq Sayeen
Sir Se Le Ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Kuch Baid Azal Se Pehle Ka
Kuch Raaz Abad Ki Aankhon K
Kuch Qisa Hijar Saraape Ka
Kuch Bheege Mosam Khawabon K
Koi Chara Meri Pasti Ka
Koi Daru Aankh Tarasti Ka
Bus Aik Nazar Se Jurh Jaye
Aaina Meri Hasti Ka
Azalon Se Raahein Takta Hai
Ik Mosam Dil Ki Basti Ka
Is Ki Aur Bhi Taqk Sayeen
Tum Sache Barhaq Sayeen
Sir Se Le Ker Pairon Tak
Dunia Shak He Shak Sayeen
Mein Aik Bhakari Lafzon Ka
Yeh Kaghaz Hain Kashkol Mere
Hain Malba Zakhmi Khawabon Ka
Yeh Rasta Bhatke Bol Mere
Yeh Arz-o-Sama Ki Pehnai
Yeh Meri Adhoori Bainai
Kia Dekhon, Kaise Dekh Sakon
Yeh Hijar Ki Jalwa Aarai
Yeh Rasta Kaale Koson Ka
Aur Aik Musalsal Tanhai
Mangon Aik Jhalak Sayeen

TUM SACHE BARHAQ SAYEEN
SIR SE LE KER PAIRON TAK
DUNIA SHAK HE SHAK SAYEEN

اگر کبھی میری یاد آئے


اگر کبھی میری یاد آئے
تو چاند راتوں کی نرم دلگیر روشنی میں
کسی ستارے کو دیکھ لینا
اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر
تمہارے قدموں میں آ گرے تو
یہ جان لینا
وہ استعارہ تھا میرے دل کا

اگر نہ آئے
مگر یہ ممکن ہی کس طرح ہے
کہ تم کسی پر نگاہ ڈالو
تو اس کی دیوارِ جاں نہ ٹوٹے
وہ اپنی ہستی نہ بھول جائے

اگر کبھی میری یاد آئے
گریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا
میں خوشبوؤں میں تمہیں ملوں گا
مجھے گلابوں کی پتیوں مین تلاش کرنا
میں اوس قطروں کے آئینوں میں تمہیں ملوں گا

اگر ہواؤں میں ، اوس قطروں کے آئینوں میں نہ پاؤ مجھ کو
تو اپنے قدموں میں دیکھ لینا
میں خاک ہوتی مسافتوں میں تمہیں ملوں گا

کہیں پہ روشن چراغ دیکھو تو جان لینا
کہ ہر پتنگے کے ساتھ میں بھی بکھر چکا ہوں
تم اپنے ہاتھوں سے ان پتنگوں کی راکھ دریا میں ڈال دینا
میں راکھ بن کر سمندروں میں سفر کروں گا
کسی نہ دیکھے ہوئے جزیرے پہ رک کے تم کو صدائیں دوں گا

سمندروں کے سفر پہ نکلو
تو اس جزیرے پہ بھی اترنا۔۔۔!!!۔

امجد اسلام امجد