محبت


وقت کے ساتھ سب ٹھیک ہو جاتا ہے.
یہی سنا تھا اسنے سب سے اسی لئے کبھی قدم نہیں لڑکھڑا ے اس کے ، کبھی ہار نہیں مانی . نہ ہی تھکا دینے والی پریشانیوں سے اور نہ ہی دن رات کی مسلسل محنت سے.
صرف یہی یاد رکھا، ایک دن سب ٹھیک ہو جائے گا ، ایک دن اسے ضرور محنت کا میٹھا پھل ملے گا.
وقت گزرتا رہا، دن رات ایک ایک لمحہ ،ہفتے مہینے اور پھر سال.
یہ نہیں سوچا خواب کیا ہوتے ہیں، یہ بھی نہیں سوچا میری زندگی سب کی زندگیوں سے اس قدر مختلف کیوں ہے . سب کی زندگیوں میں جو رونق اور روشنی ہے وہ میری زندگی میں کیوں نہیں .
………………………………….
………………………………………….
………………………………………………..
کیا سوچ رہی ہو؟
کچھ نہیں.
خیر کچھ تو سوچ رہی تھی پر یونہی کہ دیا کچھ نہیں. اب بتانا نہ چاہو تو الگ بات ہے.
……………………………………………….
تمنے کھانا کھا لیا؟
ہاں . کھا لیا .
چاے پیو گی ؟
ہاں نیکی اور پوچھ پوچھ .
………………………………………………
بال میں سفیدی اترنے لگی ہے. کمرے سے نکلتے سمے آیئے میں دیکھ کر سوچا تھا اس نے .
………………………………………………
………………………………………………………….
……………………………………………………………………
پانی ابلنے لگا تو دودھ پتی ڈال کر اسے خیال آیا.
تمنے شادی نہیں کی؟
آج ایک کولیگ نے پوچھا تھا.
نہیں !
کیوں؟
پتا نہیں.
یہ کیا بات ہوئی .
اور وہ مسکرا دی.
………………………………………….
چاے میں ابال آ گیا تھا .
………………………………………….
یہ لو چاے .
ارے واہ . تمنے تو کمال کر دیا. تمہے پتا ہے سردی کی راتوں میں چاے پینے کا اپنا ہی مزہ ہے.
وو مسکرا دی.
کیا بات ہے؟ بہت خاموش ہو؟
نہیں تو.
اچھا ……………
تمنے بتایا نہیں آج tv پہ کونسا ڈرامہ چلا تھا؟
آج …………
ارے یاد آیا. آج وہی جس میں ہیرو مر جاتا ہے بیچارہ اور لڑکی ظلم برداشت کرتی رہتی ہے. اب یہ بھی کوئی ڈرامہ ہوا ہوا بھلا.
کیوں؟
ارے ڈرامہ کو ڈرامہ ہونا چاہیے. اصلی زندگی سے مختلف . کچھ رنگ ہونے چاہییں کچھ ہنسی کچھ مزہ.
یہ تو وہی بات ہویی سوتی جاگتی زندگی اور ڈرامہ میں کوئی فرق ہی نہیں.
فرق؟
ہاں . اب پتا ہے وہ میری سہیلی بتا رہی تھی کہ اسکی پھوپی کی بیٹی کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہے ہوا. شوہر مر گیا تو نند اور ساس کو مفت کی ملازمہ مل گیی وہ بھی بےزبان . اب اگر کچھ بولے گی تو کہاں جائے گی. بھائی تو رکھنے والے نہیں اسے . ماں باپ کی کون سنتا ہے آج کل . سو بس بیچاری. مجھے تو بہت ترس آیا اس پر .
ہمم…
کیا ہوا؟
نیند آ رہی ہے . کل جاب پر بھی جانا ہے. میں سو رہی ہوں.
اف ہے. اچھا سو جاؤ.
………………………………………………………………
………………………………………………
…………………………….
……………..
آج Emails چیک کرتے ہوے اسے ایک شناسا نام نظر آیا. سنا سنا سا ہے .
Email کھولی تو….
کیسی ہیں . میں یاد ہوں آپ کو…………………….. اور نہ جانے یہ بندا کیوں یاد رہ گیا تھا اسے، آج اتنے برس گزرنے کے بعد بھی.
جواب دے کر یہی سوچتی رہی. پھر روز کے کاموں میں الجھ کر بھول بھی گیی
جواب آیا تھا ……………..
بچے کیسے ہیں آپ کے اور شوہر.
حیرت ہویی اسے …
میری شادی نہیں ہویی.
کیوں؟
کوئی ملا نہیں؟
نہیں. کسی نے مجھے ڈھونڈا ہی نہیں.
ارے یہ کیسا جواب ہوا.
بس یہی جواب ہے.
آپ نے کر لی شادی؟
میری امی ڈھونڈ رہی ہیں لڑکیاں.
کیوں کتنی شادیاں کرنی ہیں آپکو؟
ایک ہی…..
پھر لڑکی ڈھونڈیں، لڑکیاں کیوں ڈھونڈ رہے ہیں.
اور وو ہنس دیا تھا.
…………………………………………………………..
……………………………………………………
…………………………………………..
میسج آیا تھا. آپ فارغ ہیں تو آپ سے کچھ دیر بات کر لوں.
ہاں آج چھٹی ہے نہ.
ڈسٹرب تو نہیں کیا آپکو؟
نہیں.
کیا کرتی ہیں چھٹی کے دن؟
کچھ خاص نہیں.
گھر کے چھوٹے چھوٹے کام.
بس؟
ہاں.
چلیں ایک گیم کھیلتے ہیں. میں سوال کروں گا آپ جواب دینا.ٹھیک؟
ٹھیک.
نام کیا ہے؟
ارے یہ تو پتا ہے آپکو.
پھر بھی بتا دیں.
اسآور .
کتابیں پڑھتی ہیں؟
ہاں کبھی کبھی.
سپورٹ کونسی پسند ہے؟
پتا نہیں. کبھی وقت نہیں ملا.
اچھا یہ بتایئں. لوگ کیسے پسند ہیں؟
زندہ دل ، دردمند، پیار کرنے والے.
برا کیا لگتا ہے؟
غرور.
اچھا کیا لگتا ہے؟
سمندر.
سمندر کیوں؟
گہرا ہوتا ہے نا. بہت سے راز اپنے اندر رکھ کر بھی بہتا رہتا ہے . پرسکون .
اچھا………….
اور کیا اچھا لگتا ہے؟
پورا چاند.
کیوں؟
طوالت طے کرتا ہے، بڑھتا ہے، گھٹتا ہے . اتنے سفر میں بھی اسکی روشنی ماند نہیں پڑتی.
کس سے شادی کریں گی؟
لڑکے سے.
وہ ہنسی تھی…… اور وہ بھی…………
ارے نہیں میرا مطلب کیسا انسان چاہیے ؟
چاہنے سے کیا ہوتا ہے؟ چاہنے سے وہ تھوڑی ملتا ہے جو ہم چاہیں.
مل بھی سکتا ہے . سب کچھ مل سکتا ہے.
اچھا آپ بتایئں……………..
لوگوں سے پیار کرنے والا، دردمند دل رکھنے والا، سب کی مدد کرنے والا، الله سے ڈرنے والا،اور محنت کرنے کے اپنی زندگی خود بنانے والا. جو خود کو دوسروں سے اونچا نہ سمجھے، کسی کو اپنے آگے حقیر نہ جانے . محنت کرنے پہ یقین رکھے اور الله پہ توکل .
اتنا سب کچھ چاہیے آپکو…………پھر آپ کیا دیں گی اسے؟
میں اسکا ساتھ زندگی کے ہر اچھے برے وقت میں، اسکو یہ یقین کہ وہ تنہا نہیں ہے. اسکا اور اسکے گھر کا خیال. وہ عزت اور وفاداری جو ایک اچھی بیوی اچھے ساتھی کو دینا چاہیے .
بس؟
اور بھی بہت کچھ ہوتا ہے ایک اچھے رشتے کو نبھانے میں لیکن سب سے ضروری تو عزت اور بھروسہ ہے نہ.
بس؟
کیا مطلب؟
میرا مطلب یہ سب کچھ تو کافی نہیں ہے .
میں سمجھی نہیں.
آپ سب کچھ دیں گی پر محبت نہیں؟
وہ ہنسنے لگی تھی…………
……………………………………………….
………………………………………………………..
آپکے سوال ختم ہو گئے ؟
نہیں؟
تو پھر جلدی سے ختم کر لیں کیوں کہ مجھے کچھ کام سمیٹنے ہیں .
پہلے آپ بتایئں محبت نہیں کریں گی ؟
کروں گی بابا. محبت بھی کروں گی. اب جانے دیں. جب کوئی ملا تب کی تب سوچیں گے.
پھر مجھ سے کریں گی؟
کیا؟
وہ سب کچھ جو آپنے کہا.
خیال، عزت، بھروسہ، شادی اور محبت؟
………………………………………………………………
……………………………………………………………………………
………………………………………………………………………………………..
وہ خاموش ہو گی تھی.
اپنے جواب نہیں دیا؟
……………………………………….
کیا جواب دیتی. سوال ہی اتنا عجیب تھا یا پھر اس کے لئے عجیب تھا .
آپ سوچ کر بتا دیں، میں انتظار کروں گا.
کتنا؟
ایک سال، دو سال، پانچ سال، آٹھ سال، پندرہ سال…………..
ارے رک جایئں اتنے سال بعد آپ میرے بھوت سے شادی کریں گے کیا. کیوں کہ اتنے سال بعد تو شائد میں زندہ بھی نہ ہوں.
نہیں آپ کہیں اسی سال کروں گا.
کیوں؟
کیوں کہ آپکو محبت بھی تو کروانی ہے نہ …………..
اور وہ دل سے ہنسا تھا. وہ تنہا نہیں تھا، کوئی اور اور بھی اسکے ساتھ ہنسنے لگا تھا .شائد محبت سیکھنے لگا تھا کوئی!
………………………………………………………
………………………………………………………………..
……………………………………………………………………………
فاصلے ہمیں دور نہیں کریں گے. میں جلد آ جاؤں گا. وعدہ .
اور پھر انتظار تھا…………..
کہاں چلو گی میرے ساتھ؟
جہاں آپ لے جاؤ.
سمندر ؟
ہاں.
………………………………………….
…………………………………………………….
……………………………………………………………..
دعا کرو میرے لئے.
کرتی ہوں روز، ہر لمحہ .
…………………………………………….
……………………………………………………..
………………………………………………………………
بہت خاموشی ہو گیی تھی . نجانے کیوں اسے لگنے لگا تھا کچھ ہونے والا ہے . کچھ برا ہونے والا ہے . وہ ڈرنے لگی تھی .
آپ جلدی آجایئں .مجھے ڈر لگتا ہے.
ڈرو نہیں، الله ہے نہ !
…………………………………….
………………………………………….
………………………………………………….
سنو! مجھے ڈر لگتا ہے .
کس بات سے؟
تمہے کھو دینے سے .
ایسا کیوں کہ رہے ہیں؟
بس یونہی.
آیندہ مت کہیے گا.
سنو. یہ زندگی بہت ظالم ہے.اس سے لڑنا پڑتا ہے. کبھی کبھی ہمیں اکیلے ہی جینا پڑتا ہے .
ایسا کیوں کہ رہے ہیں؟
بس تمہے بتا رہا ہوں.
……………………………………………
………………………………………………………
…………………………………………………………………..
پھر وہ اکیلی رہ گیی تھی . وہ چلا گیا تھا ہمیشہ کہ لئے.اسے تنہا جینے کے لئے چھوڑ کر.
…………………………………………
میرے پاس زیادہ وقت نہیں ہے . مجھے معاف کر دو.
……………………………………………
اسکی کوئی التجا نہیں سنی تھی اسنے، اسکی کسی بات کا کوئی جواب نہیں دیا تھا، بس وہ چلا گیا تھا .
الله نے بھی اسکی کوئی دعا نہیں سنی تھی. نہ اسکے سجدے کام آے نہ آنسو .اسے لگا اسنے زندگی میں کبھی کوئی اچھا کام نہیں کیا تھا، اسی لئے آج سب کچھ ٹھیک نہیں ہوا تھا بلکہ سب کچھ ختم ہو گیا تھا!
……………………………………………..
…………………………………………………………..
…………………………………………………………………….
اسنے آنکھیں بند کرلی تھیں . ایک آنسو نکل کر تکیے میں جذب ہو گیا تھا.
تم اب تک سوئی نہیں؟ سو جاؤ.
ہاں. سردی بہت ہے نہ.شائد اسلئے.
ہمم …………..
آنکھیں بند کر لی تھیں پر …………………
مجھے بھول جاؤ!
آواز آیی تھی…….
کیسے؟ یہ بھی بتا دو!
…………………………………………………………………
……………………………………………………………………………….
…………………………………………………………………………………………….
تھمنے شادی نہیں کی اسآور ؟
اور وہ مسکرا دی تھی!
………………………………………………………….
اب کبھی کچھ ٹھیک نہیں ہوگا. اسنے ایک جگہ پڑھا تھا اللہ کسی پہ ظلم نہیں کرتا، بندہ خود اپنے آپ پر ظلم کرتا ہے اور وہ یہی سوچتی تھی اسنے اپنے آپ پر کیا ظلم کیا.
………………………………………………………….
………………………………………………….
………………………………………..
……………………………..
پتا ہے آج ڈرامہ میں کیا ہوا، ارے وہی والا ………………
اور وہ بس مسکرا رہی تھی، شائد!

Advertisements

احساسات کا خزانہ


آج پھر بہت خاموشی ہے. ہر گزرتے لمحے میں تھکن بڑھتی جا رہی تھی، کچھ کہنا تھا شاید پر الفاظ کہیں کھو گئے تھے جیسے …..
کچھ سوچ کر کاغذ قلم اٹھایا اور برامدے میں لگے پرانے پیپل کے نیچے آ بیٹھی.  رات کا سناٹا پھیل رہا تھا ….

ایک مٹی کا محل تھا اور اس میں ایک موم کی شہزادی رہتی تھی جسکی کلایئوں میں کانچ کی چوڑیاں کھنکتی تھیں . اس مٹی کے محل کے ارد گرد بہت سے پھول تھے جن پہ رنگ برنگی تتلیاں اڑتی پھرتی تھیں .شہزادی کے پاس ایک بڑا سا صندوق تھا جس میں چھوٹے چھوٹے احساسات کا انبار تھا . شہزادی اپنی دنیا میں مگن خوش تھی .
پھر ایک روز وہ اپنے محل سے باہر نکلی دنیا کی سیر کو ، چلتے چلتے کیی اونچے نیچے ٹیلوں پر اترتے چڑھتے پھسلی ، کبھی چوٹ لگی کبھی درد کی شدد سے آنکھوں سے آنسو بھی بہے ، پر شہزادی نے ہمت نہیں ہاری اور دنیا کا سامنا کرتی رہی .
اچانک ایک موڑ پہ ایک شہزادہ ٹکرایا پر شہزادی اس بات سے انجان تھی کہ وہ مٹی کے محل کا نہیں دنیا کا شہزادہ تھا . کچھ ساعتیں اچھی بیت گیئں ، پھر شہزادہ اکتا گیا اور جاتے جاتے شہزادی کے صندوق سے کچھ احساسات چرا کر لے گیا. شہزادی نے اسے بہت روکا بہت روئی پر شہزادہ چلا گیا.
شہزادی نے آنسو پونچھے اور سفر دوبارہ شروع کیا . اب کی بار شہزادی کے پاؤں بھی دنیا کے کانٹوں سے زخمی ہو گئے ، اس کے پاس دوا بھی نہیں تھی اور دنیا نے جاننے کی کوشش بھی نہیں کی کہ شہزادی کیوں رو رہی ہے. زخم خود ہی بھرنے لگے ، شہزادی کچھ اور آگے بڑھ گیی .
سفر سالوں پہ محیط تھا ، وقت کے ساتھ شہزادی کا اکلوتا خزانہ اس کے احساسات ختم ہوتے گئے .
وقت نے شہزادی کو ایک اور شہزادے سے ملوایا پر اب کی بار شہزادی احساسات کی کمی کی وجہ سے رکنے کو تیار نہ تھی . شہزادے نے شہزادی کو احساسات کا ایک اور صندوق تھما دیا یہ کہ کر کے وہ کبھی واپس نہیں مانگے گا اور شہزادی کے ساتھ دنیا کا سفر طے کر کے اس کے مٹی کے محل میں اس کے ساتھ رہے گا .
شہزادی خوش  تھی اور اسی خوشی میں وہ اس دیو کو بھی بھول گیی جو ہر وقت اسے ستاتا تھا ، چاہے اس کا مٹی کا محل ہو یا دنیا کا سفر وہ دیو اس کو کا ہراساں کرنا نہیں بھولتا تھا …
شہزادے نے شہزادی کو دنیا کے کیی خوبصورت باغ دکھاے جو شہزادی نے پہلے کبھی نہیں دیکھے تھے . ایک روز شہزادی نیند سے جاگی تو اسے شہزادہ کہیں دکھایی نہیں دیا. وہ اسے تلاش کرنے نکلی، صبح سے شام ہو گیی پر شہزادہ نہ ملا . شہزادی کے پیر بھاگتے بھاگتے زخمی ہو گئے پر نہ شہزادہ لوٹا نہ اسکی خبر آیی . رات ہو گیی تب شہزادی کو معلوم ہوا کے احساسات کے دونو صندوق غائب تھے . دنیا کے سفر میں شہزادی کا تمام خزانہ کھو گیا جو دوبارہ کبھی نہیں ملا .
رات گہری ہو گیی اور دیو شہزادی کو ستانے آن پونچھا پر اب کی بار شہزادی خوفزدہ نہیں ہویی بلکہ خاموشی سے دیو کو دیکھتی رہی .
شہزادی کی خاموشی اس رات کے بعد کبھی نہیں ٹوٹی ، کسی نے دوبارہ شہزادی کی آواز نہیں سنی .
مٹی کا محل آج بھی خالی ہے ، پھول بھی اپنی جگہ موجود ہیں پر اب نا وہاں کوئی احساسات کا خزانہ ہے نہ شہزادی…..

ہوا میں ٹھنڈک بڑھ گیی تھی، بادلوں نے چاند کی روشنی کو مدھم کر دیا تھا . سرد ہوا نے اسے وہاں سے اٹھنے پر مجبور کر دیا . اس نے کاغذ قلم اٹھایا اور اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیی. اسے نیند آ رہی تھی ، دروازہ بند تھا اور باہر بارش کا شور بڑھ گیا تھا !

Dead!


Don’t go!
Please don’t leave me alone, I beg you. Don’t go!
I;
I am sorry I have to. I would have stopped if I could but I have to go. you are not my destiny!
Destiny; So take me along with you. I will go wherever you will take me but don’t leave me nowhere.
you chose the wrong person, I am not the one who could stand by you. Change your way, it’s not too late or you will be ruined.
My last verdict.
Stay happy; Bye forever!

Coldness was never felt as hard as it is.
I am DEAD!

خالی آنگن


چٹکی او چٹکی !
کیا ہے ابیہ، کیوں چلا رہی ہیں ؟ ارے لڑکی کبھی تو سیدھی بات کیا کرو ….. اچھا اچھا اب بتایئں کیوں آواز دے رہی تھیں ؟ ارے سن چٹکی ایک کام تو کر دے میرا …. بس معلوم تھا مجھے کہ ضرور کوئی کام آن پڑا ہے تبھی ہمارے نام کی دہایی دی جا رہی ہے ورنہ ….. اچھا اچھا ، خالہ امی کا سرہانہ دیکھ لے کہ وہاں سٹور کی چابیاں موجود ہیں یا نہیں ….. کیا ! خالہ امی کی چابیاں ! نہ بابا نہ ، ہم نہیں جانے کے وہاں …. چٹکی سن تو ….. اپنے چھوٹے سے کروا لیجیو ….
…………………………………………..
…………………………………………..
ہاے دلاراں بی یہ کیا کیا تمنے ؟ سارے صندوق بند کر دیے….. آے ہاے ننھی آپا، ایسا کیا کر دیا ہمنے . صندوق ہے تو بند کرواے ہیں ، اس میں بھی تمہارا ہے خیال کیا ورنہ ان لڑکیوں نے تھوڑا خیال کرنا تھا ، ساری چیزوں کا ناس مار دیا ہے . بس ٹھٹھے لگوا لو ان سے اور کچھ کرنے کے نہیں . ننھی آپا لکھوا لو ہمسے ، کوئی نہیں بیاہنے کا انکو ….. آے ہاے دلاراں بی ایسا تو نہ کہو ، آخر کو اپنی بچیاں ہیں اور …….
دلاراں بی ، دلاراں بی !
کیا ہوا چٹکی ؟ کہاں سے بھاگے آرہی ہے ، دم لے لے . دلاراں بی بہت بھوک لگی ہے ، قسم لے لو جو صبح سے دھیلا بھی منہ میں ڈالا ہو ….. آ میری بچی ، ہم دیے دیتے ہیں ، یہاں تو کسی کو خیال نہیں کہ بچیاں سویرے سے بھوکی ہیں ، کوئی کھانے کو ہے پوچھ لے ہماری بچیوں سے …. ہم جا رہے ہیں ننھی آپا ، ہماری بٹیا کے لئے کچھ بناے دیتے ہیں …..
دلاراں بی بھی نا…..
…………………………………………….
…………………………………………….
ہریالے میاں، بارش آنے والی ہے ، کواڑ بند کر دیں . بڑی آپا ہم وہیں کو جا رہے تھے . طوفان آنے والا ہے شائد …..
……………………………………………
……………………………………………
بجو آنگن میں تنہا کیوں بیٹھی ہیں ، ہوا بہت تیز ہے ، اندر چلتے ہیں .
بجو ، بجو !
ہاں ؛ تم کب آیئ چٹکی ؟ ہم تو ابھی آے پر آپ کیا سوچ رہی تھیں ؟…. آنگن میں پتے گرنے لگے ہیں چٹکی ، کواڑ …..
ہاں وہ تو بڑی آپا نے ہریالے میاں کو کہا تھا بند کرنے کو …..
کواڑ بند کرنے کو ، پر چٹکی …………. کیا ہوا بجو ؟ اب تلک تک رہی ہیں ؟…………….
چٹکی بارش شروع ہو گیئ ہے ، برامدے کا دروازہ بند کر دو ………..
…………………………………………..
…………………………………………..
ارے کسی نے ندیا کو دیکھا ، ضرور آنگن میں ہو گی. ہم ہی دیکھ لیتے ہیں .
ارے نہیں ننھی آپا ، ہمنے انھے اپنے کمرے کی طرف جاتے ہوے دیکھا ہے …… لگتا ہے آج بارش پھر برسے گی !
………………………………………….
………………………………………….
…………………………………………
………………………………………….
ارے دلاراں بی جلدی کر لیجئے . ابھی چٹکی ، ابیہ اور بڑے بچے آجایئں گے . آپ تو جانتی ہیں کتنا ہنگامہ رہے گا ، آخر کو سالوں بعد سب اکھٹے ہو رہے ہیں چھوٹے کی شادی میں . پہلے تو چٹکی ہی ہنگامہ کے رکھتی تھی ، اب تو بچوں والی ہو گیئ ہیں سب ، کہاں تک کر بیٹھتے ہوں گے بچے .
سہی کہتی ہیں ننھی آپا ، اب تو آنگن بھی سونا رہتا ہے .
کہاں رہ گیئ تم دونو ، معلوم بھی ہے کتنے کام ہیں کرنے کو …………
آ ہی رہے تھے بڑی آپا ……….
……………………………………………..
……………………………………………..
شادی کا ہنگامہ تھم گیا تھا . سب برآمدے میں بیٹھے تھے ، بچوں کا شور اٹھ رہا تھا آنگن سے . کواڑ ہمیشہ کی ترہان کھلا تھا .
ہریالے میاں کواڑ بند کر دیں ، بارش کی آمد لگتی ہے …. ابھی کیے دیتے ہیں ننھی آپا ….
کوئی کواڑ دکھیل کر اندر داخل ہو رہا تھا ،
ارے ………………….
بڑی آپا ، ننھی آپا ، دلاراں بی …………دیکھئے تو کون آیا ہے .
سفیان میاں ……………
…………………………………………….
…………………………………………….
بجو بجو ؛ بجو کہاں ہیں آپ ؟ دیکھیں تو کون آیا ہے …. بجو !
چٹکی ک قدم چوکھٹ میں تھم گئے تھے ………
خالہ امی …….
ارے کہاں ہے ندیا ، ندیا دیکھ تو کون ………
چٹکی !…………
خالہ امی سفیان بھیا !
………………………………………………
………………………………………………
سفیان میاں دیر کر دی تم نے ، ندیا سوکھ چکی .
بارش تھم چکی تھی …………..
اب کواڑ بند کرنے یا کھولنے کا کوئی فائدہ نہیں ، منتظر نگاہیں نہیں رہیں …………
……………………………………………
……………………………………………
بجو کے کمرے میں گہرا سکوت تھا اور آنکھیں بند ہو چکی تھیں .
سفیان میاں سر جھکاے ننگے فرش پر بیٹھ گئے ………
………………………………………….
…………………………………………….
آنگن خالی تھا !

Story Never Ends!


You are not supposed to talk to me in arrogant way; I have no time for your crappy long lasting lecture.
The confront was stunned.
Cell phone was ringing continuously; alright alright, just coming.
He heard the door shut behind his back; fell on the Study chair.

Dad! Yes my son.
What are you doing? He smiled at his little one; I am cooking a meal for you sunny. What are you cooking Dad? It’s you favorite Pasta. Oh really! You are cooking Pasta for me; his eyes twinkled.
Where did you learn it from? Dad burst into laughter; your simple questions made me learn all that. Yeah! But Dad; When did I teach you, I don’t remember;

Son; phone rang….

Hello; oh Murad, how are you doing? I am great, thanks. Oh! Sounds great but I am sorry, couldn’t make it. No no, it’s Sunday and whole day for Zark. Yea, you are right; apology from my side. Haha, ok Bye.

Hey Dad, it’s boiling.
Don’t go close, stay back Zark. He rushed towards stove.

Son, get ready, we are going out; really Dad, Oh I Love you. Zark jumped off the bed.
What’s wrong sunny? My laces are giving me tough time; Zark replied in grouchy mood. Oo! Let me handle, so simple.
Can you Dad? How do you make it? Wao, you are too good.
He smiled, should we leave now? Sure, let’s go!

Your bed time story, Mama and little bear. No Dad, I don’t like this one. Which one then? Paa and little Johny, Zark whispered.
He was telling him the story; crawling fingers in his hair, “Johny came up when Paa..” Zark Snoozed.
He kissed him gently, me and little Zark; Night moved on.

Hit on the Door woke him up.
Zark, is it you? Zark!
Again knock on the door, he moved towards the door and opened!

He couldn’t sleep for 3 days, restless and agitated, till Zark opened eyes.
Zark, Zark! Doctor.
Take him home, he is fine now; Doctor smiled in professional way.

He lifted him out of car, hold him and let him laid on bed.
Past recalled; Dad my bed time story.
Are you sure want to listen Mama and little bear?
No, I surely want to listen Paa and little Johny.
He looked into his eyes; tear spotted, hey sunny! You are my sun shine and I will never let it gloomy. Your smile is my life and …
My stupid questions teach you the cooking; right Dad? He quirked.

Yea; yes, they do. Little laughter.
I am sorry Dad.
Are you?
Zark dazed at him.
Dad Smiled; Both Smiled.

Is it the end of the story Paa? Rayan nodded his head.
No my dear, Story never ends, it goes on.
How Paa?
Dad, Paa and little Rayan!