آخری دوست


اتنی خاموش کیوں ہو؟
……………………………
کچھ کہتی کیوں نہیں، اتنی خاموش کیوں ہو؟
ہاں ! نہیں تو.
چلو اٹھو اندر چلو ، یہاں ٹھنڈ بڑھ گیی ہے.
ہاں چلو….
…………………………………………………….
…………………………………………………………..
…………………………………………………………………..
تو آج میرا آخری دوست بھی چلا گیا. ایک تم ہی تو رہ گئے تھے جس سے میں بات کر لیا کرتی تھی کچھ دل ہی بہل جاتا تھا . ورنہ تو سناٹا اتنا ہے کہ کچھ بھی سنایی نہیں دیتا.
آج سناٹا کچھ اور بڑھ گیا ہے .
کیا ہوا سو کیوں نہیں رہی ؟
سو ہی تو رہی ہوں .
اچھا؛ آنکھیں کھول کر کون سوتا ہے……
……………………………………………………
وہ بھی تو چلا گیا تھا. کچھ بھی سوچے بغیر . ایک بار بھی تو نہیں سوچا تھا اسنے جانے سے پہلے …..
پھر وقت کے ساتھ ساتھ سب ساتھی چلے گئے . وقت آگے بڑھ گیا پر میرا وقت وہیں رک گیا تھا. تب وقت تھمنے کی بہت تکلیف سہی تھی.
اب تکلیف بھی نہیں ہوتی. اسی لئے تو آج اس کے جانے پہ دل بلکل خاموش ہے . کوئی صدا کوئی فریاد نہیں.
آج سناٹا اتنا بڑھ گیا ہے کہ اپنی ذات سے بھی کوئی الفت نہیں رہی !

Advertisements

مرد کی محبّت


محبّت !

محبّت صرف عورت کرتی ہے ، اپنا سب کچھ ایک شخص کے نام کر کے . عورت کی محبّت اسے ایک وجود کے گرد محصور کر دیتی ہے. وہ صرف اسی شخص کو سوچتی ہے اور اسی کی پسند کے مطابق خود کو ڈھال لیتی ہے. اسے باقی دنیا سے غرض نہیں ہوتی، وہ اپنی انا کو خود اپنے ہی پیروں تلے روند کر صرف اپنی محبّت کو پوجتی ہے.

مرد؛ مرد کسی عورت سے محبّت نہیں کرتا. وہ صرف اپنی آنا اپنی ذات سے محبّت کرتا ہے. اسے عورت اپنے قدموں میں جھکی ہوئی چاہیے. وو خود کو خدا بنا لیتا ہے اور چاہتا ہے عورت اسے بلا کسی عذر کے پوجتی رہے. مرد صرف حاصل کرنا چاہتا ہے. اور جو عورت اسے بغیر کسی تگ و دو کے مل جائے وہ اسے ٹھکرا کر اگے چل دیتا ہے. اسے اس بات کی کوئی پرواہ نہیں ہوتی کے وہ عورت اسکی محبّت میں خود کو بھلا کر صرف اس کے لئے اپنا آپ بدلنے کو تیار ہو گیی ہے. وہ عورت کے چہرے پہ لکھی تحریر نہیں پڑھ سکتا. مرد جسے حاصل کر لے اسے توڑ دیتا ہے. اور یہی اسکی انا کی تسکین ہوتی ہے.

مرد عورت کو ٹھوکر مار کر چل دیتا ہے اور عورت تمام عمر ایک وصل لاحاصل میں سرگرداں رہتی ہے. اسکی انا اور خوداری اسکی محبّت کے سامنے ہتھیار ڈال دیتی ہے. پھر تمام عمر وہ ٹھکراے جانے کی اذیت سہتی ہے اور خود کو بہلاتی رہتی ہے.

مرد کبھی محبّت نہیں کرتا . مرد اپنی انا کہ حصار میں قید رہتا ہے. اسے عورت کی محبّت کی نہیں اپنی جیت سے لگاو ہوتا ہے!

مرد کی محبّت ایک سراب کی مانند ہے اور سراب کبھی حقیقت نہیں بنتا!

Inspiration from Ashfaq Ahmed!

کیوں؟


خدا کو ہمیشہ وہی کیوں چاہیے جو مجھے چاہیے ہوتا ہے؟ وہ ہمیشہ مجھ سے میری چاہ کیوں چھین لیتا ہے ؟ وہ میری دعا کیوں نہیں سنتا؟ وہ میری دعایئں قبول کیوں نہیں کرتا؟ کیا کمی ہے اس کے پاس پھر وہ میری چاہ ہی کیوں لے لیتا ہے مجھ سے؟ وہ تو بےنیاز ہے نا ، سب کو بنا مانگے دے دیتا ہے پھر مجھے مانگے سے بھی کیوں نہیں دیتا؟ گناہ تو سب کرتے ہیں، میں تنہا تو نہیں . پھر مجھے ہی کیوں نہیں ملتا .
کیا میں انسان نہیں یا مجھے تکلیف نہیں ہوتی. پھر الله کو وہ تکلیف کیوں نہیں دیکھتی ؟ مجھے تکلیف ہوتی ہے بہت ہوتی ہے، پھر الله کو کیوں محسوس نہیں ہوتی؟
کیوں؟

محبت


وقت کے ساتھ سب ٹھیک ہو جاتا ہے.
یہی سنا تھا اسنے سب سے اسی لئے کبھی قدم نہیں لڑکھڑا ے اس کے ، کبھی ہار نہیں مانی . نہ ہی تھکا دینے والی پریشانیوں سے اور نہ ہی دن رات کی مسلسل محنت سے.
صرف یہی یاد رکھا، ایک دن سب ٹھیک ہو جائے گا ، ایک دن اسے ضرور محنت کا میٹھا پھل ملے گا.
وقت گزرتا رہا، دن رات ایک ایک لمحہ ،ہفتے مہینے اور پھر سال.
یہ نہیں سوچا خواب کیا ہوتے ہیں، یہ بھی نہیں سوچا میری زندگی سب کی زندگیوں سے اس قدر مختلف کیوں ہے . سب کی زندگیوں میں جو رونق اور روشنی ہے وہ میری زندگی میں کیوں نہیں .
………………………………….
………………………………………….
………………………………………………..
کیا سوچ رہی ہو؟
کچھ نہیں.
خیر کچھ تو سوچ رہی تھی پر یونہی کہ دیا کچھ نہیں. اب بتانا نہ چاہو تو الگ بات ہے.
……………………………………………….
تمنے کھانا کھا لیا؟
ہاں . کھا لیا .
چاے پیو گی ؟
ہاں نیکی اور پوچھ پوچھ .
………………………………………………
بال میں سفیدی اترنے لگی ہے. کمرے سے نکلتے سمے آیئے میں دیکھ کر سوچا تھا اس نے .
………………………………………………
………………………………………………………….
……………………………………………………………………
پانی ابلنے لگا تو دودھ پتی ڈال کر اسے خیال آیا.
تمنے شادی نہیں کی؟
آج ایک کولیگ نے پوچھا تھا.
نہیں !
کیوں؟
پتا نہیں.
یہ کیا بات ہوئی .
اور وہ مسکرا دی.
………………………………………….
چاے میں ابال آ گیا تھا .
………………………………………….
یہ لو چاے .
ارے واہ . تمنے تو کمال کر دیا. تمہے پتا ہے سردی کی راتوں میں چاے پینے کا اپنا ہی مزہ ہے.
وو مسکرا دی.
کیا بات ہے؟ بہت خاموش ہو؟
نہیں تو.
اچھا ……………
تمنے بتایا نہیں آج tv پہ کونسا ڈرامہ چلا تھا؟
آج …………
ارے یاد آیا. آج وہی جس میں ہیرو مر جاتا ہے بیچارہ اور لڑکی ظلم برداشت کرتی رہتی ہے. اب یہ بھی کوئی ڈرامہ ہوا ہوا بھلا.
کیوں؟
ارے ڈرامہ کو ڈرامہ ہونا چاہیے. اصلی زندگی سے مختلف . کچھ رنگ ہونے چاہییں کچھ ہنسی کچھ مزہ.
یہ تو وہی بات ہویی سوتی جاگتی زندگی اور ڈرامہ میں کوئی فرق ہی نہیں.
فرق؟
ہاں . اب پتا ہے وہ میری سہیلی بتا رہی تھی کہ اسکی پھوپی کی بیٹی کے ساتھ بھی کچھ ایسا ہے ہوا. شوہر مر گیا تو نند اور ساس کو مفت کی ملازمہ مل گیی وہ بھی بےزبان . اب اگر کچھ بولے گی تو کہاں جائے گی. بھائی تو رکھنے والے نہیں اسے . ماں باپ کی کون سنتا ہے آج کل . سو بس بیچاری. مجھے تو بہت ترس آیا اس پر .
ہمم…
کیا ہوا؟
نیند آ رہی ہے . کل جاب پر بھی جانا ہے. میں سو رہی ہوں.
اف ہے. اچھا سو جاؤ.
………………………………………………………………
………………………………………………
…………………………….
……………..
آج Emails چیک کرتے ہوے اسے ایک شناسا نام نظر آیا. سنا سنا سا ہے .
Email کھولی تو….
کیسی ہیں . میں یاد ہوں آپ کو…………………….. اور نہ جانے یہ بندا کیوں یاد رہ گیا تھا اسے، آج اتنے برس گزرنے کے بعد بھی.
جواب دے کر یہی سوچتی رہی. پھر روز کے کاموں میں الجھ کر بھول بھی گیی
جواب آیا تھا ……………..
بچے کیسے ہیں آپ کے اور شوہر.
حیرت ہویی اسے …
میری شادی نہیں ہویی.
کیوں؟
کوئی ملا نہیں؟
نہیں. کسی نے مجھے ڈھونڈا ہی نہیں.
ارے یہ کیسا جواب ہوا.
بس یہی جواب ہے.
آپ نے کر لی شادی؟
میری امی ڈھونڈ رہی ہیں لڑکیاں.
کیوں کتنی شادیاں کرنی ہیں آپکو؟
ایک ہی…..
پھر لڑکی ڈھونڈیں، لڑکیاں کیوں ڈھونڈ رہے ہیں.
اور وو ہنس دیا تھا.
…………………………………………………………..
……………………………………………………
…………………………………………..
میسج آیا تھا. آپ فارغ ہیں تو آپ سے کچھ دیر بات کر لوں.
ہاں آج چھٹی ہے نہ.
ڈسٹرب تو نہیں کیا آپکو؟
نہیں.
کیا کرتی ہیں چھٹی کے دن؟
کچھ خاص نہیں.
گھر کے چھوٹے چھوٹے کام.
بس؟
ہاں.
چلیں ایک گیم کھیلتے ہیں. میں سوال کروں گا آپ جواب دینا.ٹھیک؟
ٹھیک.
نام کیا ہے؟
ارے یہ تو پتا ہے آپکو.
پھر بھی بتا دیں.
اسآور .
کتابیں پڑھتی ہیں؟
ہاں کبھی کبھی.
سپورٹ کونسی پسند ہے؟
پتا نہیں. کبھی وقت نہیں ملا.
اچھا یہ بتایئں. لوگ کیسے پسند ہیں؟
زندہ دل ، دردمند، پیار کرنے والے.
برا کیا لگتا ہے؟
غرور.
اچھا کیا لگتا ہے؟
سمندر.
سمندر کیوں؟
گہرا ہوتا ہے نا. بہت سے راز اپنے اندر رکھ کر بھی بہتا رہتا ہے . پرسکون .
اچھا………….
اور کیا اچھا لگتا ہے؟
پورا چاند.
کیوں؟
طوالت طے کرتا ہے، بڑھتا ہے، گھٹتا ہے . اتنے سفر میں بھی اسکی روشنی ماند نہیں پڑتی.
کس سے شادی کریں گی؟
لڑکے سے.
وہ ہنسی تھی…… اور وہ بھی…………
ارے نہیں میرا مطلب کیسا انسان چاہیے ؟
چاہنے سے کیا ہوتا ہے؟ چاہنے سے وہ تھوڑی ملتا ہے جو ہم چاہیں.
مل بھی سکتا ہے . سب کچھ مل سکتا ہے.
اچھا آپ بتایئں……………..
لوگوں سے پیار کرنے والا، دردمند دل رکھنے والا، سب کی مدد کرنے والا، الله سے ڈرنے والا،اور محنت کرنے کے اپنی زندگی خود بنانے والا. جو خود کو دوسروں سے اونچا نہ سمجھے، کسی کو اپنے آگے حقیر نہ جانے . محنت کرنے پہ یقین رکھے اور الله پہ توکل .
اتنا سب کچھ چاہیے آپکو…………پھر آپ کیا دیں گی اسے؟
میں اسکا ساتھ زندگی کے ہر اچھے برے وقت میں، اسکو یہ یقین کہ وہ تنہا نہیں ہے. اسکا اور اسکے گھر کا خیال. وہ عزت اور وفاداری جو ایک اچھی بیوی اچھے ساتھی کو دینا چاہیے .
بس؟
اور بھی بہت کچھ ہوتا ہے ایک اچھے رشتے کو نبھانے میں لیکن سب سے ضروری تو عزت اور بھروسہ ہے نہ.
بس؟
کیا مطلب؟
میرا مطلب یہ سب کچھ تو کافی نہیں ہے .
میں سمجھی نہیں.
آپ سب کچھ دیں گی پر محبت نہیں؟
وہ ہنسنے لگی تھی…………
……………………………………………….
………………………………………………………..
آپکے سوال ختم ہو گئے ؟
نہیں؟
تو پھر جلدی سے ختم کر لیں کیوں کہ مجھے کچھ کام سمیٹنے ہیں .
پہلے آپ بتایئں محبت نہیں کریں گی ؟
کروں گی بابا. محبت بھی کروں گی. اب جانے دیں. جب کوئی ملا تب کی تب سوچیں گے.
پھر مجھ سے کریں گی؟
کیا؟
وہ سب کچھ جو آپنے کہا.
خیال، عزت، بھروسہ، شادی اور محبت؟
………………………………………………………………
……………………………………………………………………………
………………………………………………………………………………………..
وہ خاموش ہو گی تھی.
اپنے جواب نہیں دیا؟
……………………………………….
کیا جواب دیتی. سوال ہی اتنا عجیب تھا یا پھر اس کے لئے عجیب تھا .
آپ سوچ کر بتا دیں، میں انتظار کروں گا.
کتنا؟
ایک سال، دو سال، پانچ سال، آٹھ سال، پندرہ سال…………..
ارے رک جایئں اتنے سال بعد آپ میرے بھوت سے شادی کریں گے کیا. کیوں کہ اتنے سال بعد تو شائد میں زندہ بھی نہ ہوں.
نہیں آپ کہیں اسی سال کروں گا.
کیوں؟
کیوں کہ آپکو محبت بھی تو کروانی ہے نہ …………..
اور وہ دل سے ہنسا تھا. وہ تنہا نہیں تھا، کوئی اور اور بھی اسکے ساتھ ہنسنے لگا تھا .شائد محبت سیکھنے لگا تھا کوئی!
………………………………………………………
………………………………………………………………..
……………………………………………………………………………
فاصلے ہمیں دور نہیں کریں گے. میں جلد آ جاؤں گا. وعدہ .
اور پھر انتظار تھا…………..
کہاں چلو گی میرے ساتھ؟
جہاں آپ لے جاؤ.
سمندر ؟
ہاں.
………………………………………….
…………………………………………………….
……………………………………………………………..
دعا کرو میرے لئے.
کرتی ہوں روز، ہر لمحہ .
…………………………………………….
……………………………………………………..
………………………………………………………………
بہت خاموشی ہو گیی تھی . نجانے کیوں اسے لگنے لگا تھا کچھ ہونے والا ہے . کچھ برا ہونے والا ہے . وہ ڈرنے لگی تھی .
آپ جلدی آجایئں .مجھے ڈر لگتا ہے.
ڈرو نہیں، الله ہے نہ !
…………………………………….
………………………………………….
………………………………………………….
سنو! مجھے ڈر لگتا ہے .
کس بات سے؟
تمہے کھو دینے سے .
ایسا کیوں کہ رہے ہیں؟
بس یونہی.
آیندہ مت کہیے گا.
سنو. یہ زندگی بہت ظالم ہے.اس سے لڑنا پڑتا ہے. کبھی کبھی ہمیں اکیلے ہی جینا پڑتا ہے .
ایسا کیوں کہ رہے ہیں؟
بس تمہے بتا رہا ہوں.
……………………………………………
………………………………………………………
…………………………………………………………………..
پھر وہ اکیلی رہ گیی تھی . وہ چلا گیا تھا ہمیشہ کہ لئے.اسے تنہا جینے کے لئے چھوڑ کر.
…………………………………………
میرے پاس زیادہ وقت نہیں ہے . مجھے معاف کر دو.
……………………………………………
اسکی کوئی التجا نہیں سنی تھی اسنے، اسکی کسی بات کا کوئی جواب نہیں دیا تھا، بس وہ چلا گیا تھا .
الله نے بھی اسکی کوئی دعا نہیں سنی تھی. نہ اسکے سجدے کام آے نہ آنسو .اسے لگا اسنے زندگی میں کبھی کوئی اچھا کام نہیں کیا تھا، اسی لئے آج سب کچھ ٹھیک نہیں ہوا تھا بلکہ سب کچھ ختم ہو گیا تھا!
……………………………………………..
…………………………………………………………..
…………………………………………………………………….
اسنے آنکھیں بند کرلی تھیں . ایک آنسو نکل کر تکیے میں جذب ہو گیا تھا.
تم اب تک سوئی نہیں؟ سو جاؤ.
ہاں. سردی بہت ہے نہ.شائد اسلئے.
ہمم …………..
آنکھیں بند کر لی تھیں پر …………………
مجھے بھول جاؤ!
آواز آیی تھی…….
کیسے؟ یہ بھی بتا دو!
…………………………………………………………………
……………………………………………………………………………….
…………………………………………………………………………………………….
تھمنے شادی نہیں کی اسآور ؟
اور وہ مسکرا دی تھی!
………………………………………………………….
اب کبھی کچھ ٹھیک نہیں ہوگا. اسنے ایک جگہ پڑھا تھا اللہ کسی پہ ظلم نہیں کرتا، بندہ خود اپنے آپ پر ظلم کرتا ہے اور وہ یہی سوچتی تھی اسنے اپنے آپ پر کیا ظلم کیا.
………………………………………………………….
………………………………………………….
………………………………………..
……………………………..
پتا ہے آج ڈرامہ میں کیا ہوا، ارے وہی والا ………………
اور وہ بس مسکرا رہی تھی، شائد!

ماضی


ضروری ہوتا ہے کہ ہم ماضی کو ایک اختتامی باب کی مانند بھول جایئں . جو وقت گزر گیا اسے اوراق کی طر ح بار بار پلٹنے سے وہ لوٹ کر نہیں آے گا نہ ہی اس کے کرداروں میں جان آے گی .
زندگی کو بڑھنے دو اور خود کو جینے دو ، اپنے لیۓ نہ سہی دوسروں کے لیۓ !

بھرم


نہ جاتے تو کیا ہوتا, بس میرا یقین تو قایم رہتا کہ دعایئں  قبول ہوتی ہیں. کبھی یوں لگتا ہے جیسے لوٹ ہی آ و گے جیسے میری دعایئں  قبول ہو ہی چکی ہیں , جیسے معجزہ  ہونے کو ہے. کہو لوٹ او گے نا . میرے یقین کا بھرم رکھنے کو ہی  کہ دو , ہاں  لوٹ آ ؤں  گا. کہ دو آ و گے نا!

نامکمل


آج مجھے محسوس ہوتا ہے کہ شائد میں دنیا کی رفتار کے ساتھ نہیں بھاگ سکتی . وقت اور دنیا سے بہت پیچھے گیی ہوں جب اپنے اور لوگوں کے خیالات کے تضاد سامنے آتے ہیں تو حقیقت زیادہ واضح اور صاف دکھایی دینے لگتی ہے. پر ایسا کب ہوا اور کیونکر ، مجھے معلوم کیوں نہیں ہوا. کیا میں واقعی بہت بے وقوف ہوں یا پھر بہت سادہ یا پھر نا اہل ؟
کیا لکھ رہی ہو؟
ہاں….
کچھ نہیں ، بس یونہی …..
تم بھی نہ جانے کس دنیا میں  رہتی ہو ، ہر وقت خاموش اور گمسُم ….
کیا سوچتی رہتی ہو؟
پتا نہیں …
پتا نہیں؟ تو پھر کسے پتا ہے؟
کیا؟
اوہو رہنے دو… میں تو تمہے بلانے آیی تھی پر تم تو کچھ لکھنے میں مگن ہو اتنی کہ تمہے آس پاس کی کوئی خبر ہے نہیں.
……………………………..
………………………………………..
آ رہی ہو؟
نہیں تم جاؤ . میرا موڈ نہیں….
جیسے تمہاری مرضی…
میری مرضی….میری مرضی بھی ہے کیا؟ مرضی کیا ہوتی ہے؟
………………………….
………………………………………….
لوگ دھوکہ کیوں دیتے ہیں اور دھوکہ دیتے وقت سوچتے کیوں نہیں کہ سامنے کھڑا انسان بھی دل رکھتا ہے.  اچھا برا محسوس ہوتا ہے . کیوں نہیں سوچتے لوگ؟
میں کب سے سوئی نہیں. آج اسے یاد آیا. شائد کافی دن ہو گئے. پر میں کیوں نہیں سویی ؟
آج میں جلدی گھر لوٹ آیی .  کے ساتھ بیٹھ کر بات چیت کروں گی پر میری بات کا کوئی جواب ہے نہیں دیتا. اور ان سب کی باتیں اتنی مختلف کیوں ہیں اور ہیں بھی تو میں حصہ لینے کی کوشش تو کرتی ہوں پھر کوئی جواب کیوں نہیں دیتا میری بات کا. شائد میں بوہت آہستہ بولتی ہوں کہ کوئی سن نہیں پاتا …..
شائد……
مجھے اپنی کتاب مکمل کرنی چاہیے. کتابیں سب سے اچھی دوست ہوتی ہیں. اسنے سنا تھا کبھی…..
……………………..
…………………………………..
پھر نہ جانے کتاب پڑھتے پڑھتے کب آنکھ لگ گیی….
برآمدے سے ابھی بھی باتوں کی آوازیں آ رہی تھیں

 

On Someone’s request, I am writing it in English font…………  🙂

Aaj mujhey mehsoos hota hai k shaid mein dunya ki raftar k sath nahi bhag sakti. waqt aur dunya se boht peechey reh gayi hun, jab apne aur logon k khayalat k tazad samne atey hain to haqiqat ziada wazeh aur saaf dikhayi dainey lagti hai, par aisa kab howa aur kionkar, mujhey maloom kion nahi howa? kya mein waqai boht bewakoof hun ya phir boht sadah ya phir na’ehl?

kya likh rahi ho?

haan…

kuch nahi, bas yunhi……….

tum bhi na janey kis dunya mein rehti ho. har waqt khamosh aur gum’sum….

kya sochti rehti ho?

pata nahi………….

pata nahi, to phir kis’sey pata hai?

kya?

oho, kuch nahi. mein to tumhey bulaney ayi thi par tum to itni magan ho kuch likhney mein k tumhey aas paas ki koi khabar he nahi…

…………………………..

………………………………………….

aa rahi ho?

nahi, tum jao. mera mood nahi……………

jaisey tumhari marzi…….

meri marzi…. meri marzi bhi hai kya? marzi kya hoti hai?

…………………………………

…………………………………………………

log dhoka kion daitey hain aur dhoka daitey waqt sochtey kion nahi k samney khara insaan bhi dil rakhta hai. acha bura mehsoos hota hai. kion nahi sochtey log?

mein kab se soi nahi. aaj isey yaad aya. shaid kafi din ho gaye. par mein soyi kion nahi?

aaj mein jaldi ghar lot ayi k sab k sath baith kar baat cheet karoon gee par meri baat ka koi jawab he nahi daita. aur in sab ki batain itni mukhtalif kion hain aur hain bhi to me hissa lainey ki koshish to karti hun phr koi jawab kion nahi daita meri baat ka. shaid mein boht ahista bolti hun k koi sun nahi pata.

shaid………….

mujhey apni kitab mukam’mil karni chaheye, kitabain sab se achi dost hoti hain. isney suna tha kabhi…..

……………………….

…………………………………………

phir na janey kitab parhtey parhtey kab aankh lag gayi.

bar’amdey se abhi bhi baton ki awazain aa rahi thi’in!